Shor Karna Humain.. Irfan Siddiqi Ghazal

Shor karna humain be-wajh nahiN aagaya hai

Koi Khanjar rag e gardan ke qareeN aagaya hai

Ko ba koo said chale aate hain gardan daalay

Shahr mein kaun shikari sar e zeeN aagaya hai

Aur kijiyee hunar e khush badanaaN ki taareef

Woh badan aag lagaane ko yahiN aagaya hai

Dil e barbaad zamaane se alag hai shayed

Saara aalam to tere zer e nageeN aagaya hai

Unke nazdeek yeh saari sukhan aaraayi thi

Tujh ko dekha hai to logon ko yaqeeN aagaya hai

Ab kisi Kheema e gah-naaz mein jaate nahi hum

beech mein kab se koi khaanaa nasheeN aagaya hai

(Irfan Siddiqi)

آ گیا تھا وہ خوش خصال پسند
تھی ہماری بھی کیا کمال پسند

حیف! بد صورتی رویّوں کی
ہائے دل تھا مرا جمال پسند

کیوں بنایا تھا ٹِھیکرا دل کو
کیوں کیا ساغرِ سفال پسند

ٹھیک ہے میں نہیں پسند اُنہیں
لیکن اس درجہ پائمال پسند

سچ نہ کہیے کہ سچ ہے صبر طلب
لوگ ہوتے ہیں اشتعال پسند

ہاں مجھے آج بھی پسند ہے وہ
اس کو کہتے ہیں لازوال پسند

حلم ہے اہلِ علم کا شیوہ
جاہ والوں کو ہے جلال پسند

وصل کو ہجر ، ناگہانی موت
ہجر کو موسمِ وصال پسند
 
فکرِ دنیا نہیں! مجھے احمدؔ
اپنی مستی اور اپنی کھال پسند

محمد احمدؔ

 

Aa gaya tha wo khush khesaal pasand

Thi hamari bhi kya kamaal pasand

Haif bad-soorati rawayyoN ki

Haaye dil tha mera jamaal pasand

Kyun banaya tha Theekra dil ko

Kyun kiya saaghar e sefaal pasand

Theek hai main nahi pasand unhein

Lekin is darja paayemaal pasand??

Sach na kahiye K sach hai sabr talab

Log hote hain ishte’aal pasand

Haan mujhe aaj bhi pasand hai woh

Is ko kahte hain lazawaal pasand

Hilm hai ahl e ilm ka shewaa

Jaah walon ko hai jalaal pasand

Wasl ko hijr, naagehaani maut

Hijr ko mausam e wesaal pasand

Fikr e duniya nahi mujhe Ahmad

Apni masti aur apni khaal pasand

(Mohammad Ahmad)

ملے بنا ہی بچھڑنے کے ڈر سے لوٹ آئے

عجیب خوف میں ہم اس کے در سے لوٹ آئے

نہ ایسے روئیے ناکامی_محبت پر

خوشی منائیے زندہ بھنور سے لوٹ آئے

یہ سوچتے ہوئے بیٹھے ہیں راہ میں رک کر

اُدھر تو گئے ہی نہیں تھے جدھر سے لوٹ آئے

لب اس کے سامنے تھے اور ہم نے چوما نہیں

سمجھ لو پاؤں اٹھے اور در سے لوٹ آئے

ابھی تو وقت ہے سورج کے ڈوبنے میں تو پھر

یہ کیا ہوا کہ پرندے سفر سے لوٹ آئے

کسی بھی طرح یہ دنیا نہ چھوڑ پائے ہم

کہ جب بھی نکلے تری رہ_گزر سے لوٹ آئے

پھر اس نے دیکھا کوئی تارا ٹوٹتے اک رات

پھر ایک روز مسافر سفر سے لوٹ آئے

مرے گزرنے کی افواہ ہی اڑا دے کوئی

کسے خبر کہ وہ جھوٹی خبر سے لوٹ آئے

(kuldeep)

 

Mile bina hi bichharne ke Dar se laut aaye
Ajeeb khauf mein hum us ke dar se latu aaye

Na aise roiye naakaamii -e- muhabbat per
Khushi manaaiye zinda bhanwar se laut aaye

Yeh sochte hue baithe hain raah mein ruk kar
Udhar to gaye hi nahi the jidhar se laut aaye

Lab uske, saamne the aur hum ne chooma nahi
Samajh lo paon uThay aur dar se laut aaye

Abhi to waqt hai suraj ke doobne mein to phir
Ye kya hua K parinday safar se laut aaye

Kisi bhi tarah ye duniya na chhoR paye hum
K jab bhi nikle teri rahguzar se laut aaye

Phir us ne dekha koi tara toot_te ek raat
Phir ek roz musafir safar se laut aaye

Mere guzarne ki afwaah hi uRaade koi
Kise khabar K woh jhooti khabar se laut aaye

(Kuldeep kumar)

Leave a Comment